قَطَراتُ عِشْق

أمير البياتي 
خَبَّأْتُُ بَعضَ قَطَراتِ عِشْقٍ
في زاويةِ المَطرْ
إلتفَّ ذراعُ ٱلثَّلجِ حولَ صَدْري
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
أزاحَتْ كفُّ الرَّبيعِ خَرِيفَ الأوْراقِ
ٱنسٰابتْ ناعمةً تُحرِّكُ خَلايا الجُنُونْ
حتی أَسبَلتْ عُيونُ الرَّغْبةِ أَجْفانَها
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
رسَمَ المَطرُ علی مَسٰاحة جِِلْدِي
أَخادِيدَ صارت أغصٰانَ شَجَرةِ زَيْتُونٍ مرتديةً ثَوبَ ٱلجَنَّة
بَكَتْ زيْتاً من الحَسْرةِ
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
تلَوَّتْ عندَ سَماعِ صَوتِ الرِّيحِ أَفْعیٰ
تَمايَلَتْ كراقِصةٍ ثَمِلةٍ سَكْریٰ
لَعَقتْ قَطَراتِ ٱلعِشْقِ ٱلمُخبَّأةَ في زاويةِ ٱلمَطرْ
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔